” خان صاحب اگر ایران ، امریکہ جھگڑے میں آپ رتی بھر بھی فریق بنے تو ۔۔۔“وزیراعظم عمران خان کووارننگ جاری کر دی گئی

اسلام آباد (ویب ڈیسک)تجزیہ کار سلیم صافی نے کہاہے کہ ہم کو کسی ایک فریق کامہرہ نہیں بننا چاہئے ،ہمارے رویے سے لگ رہاہے کہ ہمارا دل کسی اور طرف ہے ، اگر ایران کے لڑائی میں ہم رتی بھر بھی فریق بنے تو ہمارے لئے بڑے خسارے کاباعث ہوگا ۔جیونیوز کے پروگرام ”رپورٹ کارڈ“میں گفتگو کرتے

ہوئے سلیم صافی نے کہا کہ اس بات کا رتی بھر امکان نہیں ہے کہ حکومت کوئی مسائل حل کرسکے گی لیکن عمران خان ٹھیک کہہ رہے ہیں کہ 2020عوام کی ترقی و خوشحالی کا سال ہوگا ۔سلیم صافی کاکہناتھا کہ امریکی وزیر خارجہ کا آرمی چیف کوفون اس بات کاثبوت ہے کہ امریکی زمینی حقائق کو سمجھ چکے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ ہم کو کسی ایک فریق کامہرہ نہیں بننا چاہئے ،ہمارے رویے سے لگ رہاہے کہ ہمارا دل کسی اور طرف ہے ۔ ایران ، ترکی اورملائیشیا یہ سمجھتے ہیں کہ ہمارا دل کسی اور کی طرف ہے ۔ روس اور چین تو یہ سمجھ رہے ہیں کہ ہمارا دل امریکہ کی طرف ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ہم یہ یقین دلا سکتے ہیں کہ ہم ایران کے خلاف استعمال نہیں ہونگے اور اپنی غیر جانبدار ی ظاہر کرنی چاہئے ۔ اگر ایران ، امریکہ جھگڑے میں ہم رتی بھر بھی فریق بنے تو ہمارے لئے بڑے خسارے کاباعث ہوگا ۔